آپ سے جب گفتگو ہونے لگی

آپ سے جب گفتگو ہونے لگی
زندگی پھر مشک بو ہونے لگی

چھوڑ کر جب ان کے اپنے چل دیے
پھر ہماری جستجو، ہونے لگی

دوستی پر تھا بھروسہ آپ کو!
موت کی کیوں آرزو ہونے لگی

حق بیانی کے جو ہم عادی ہوئے
بس ہماری گفتگو ہونے لگی

غم میں ہوں! اب دوست و احباب کی
اصل صورت روبرو ہونے لگی

جب صنم روٹھا تو اے شمشاد پھر
خلوتوں میں خوب ھو ہونے لگی

شمشاد نوری نولپراسی 


يه بھي پڑھيں:

فکرتیری باوضو ہونے لگی

عشق میں آنسو بہائے ہیں بہت

جب سے تیری آرزو ہونے لگی

Share this on

متعلقہ اشاعت

This Post Has One Comment

جواب دیں