ایک تصویرِ محبت تھی کہ زندہ ہوگئی

ایک تصویرِ محبت تھی کہ زندہ ہوگئی

داستانِ بن ادہم
از ۔ میرزا امجد رازی

تھی کہیں اِک وادیِ عشرت نگارِ زندگی
جس میں تھا اِک جوششِ رنگِ بہارِ زندگی
جس کی خوشبو سے ٹپکتا تھا خمارِ زندگی
گِر رہی تھی جس کی جانب آبشارِ زندگی

جلوۂ خورشیدِ ایمن کی امیں تھی وہ جگہ
گلشنِ انوارِ فردوسِ بریں تھی وہ جگہ
نغمۂ سازِ طیورانِ حسیں تھی وہ جگہ
چاندنی، زہرہ نشیں، خلد آفریں تھی وہ جگہ

موجۂ دریا میں وہ اِک اضطرابِ صبح و شام
جس کی شورش میں بپا تھا نغمۂ کیفِ دوام
دامنِ شب پر تھی نغمۂ ریزئ ماہِ تمام
صبحِ مشرق سے ضیائے مہر کرتی تھی سلام

کوثر و تسنیم کا تھیں عکس جس کی ندّیاں
اطلس و کمخواب کی تھیں ہر طرف فرّاشیاں
جلوہ گاہِ چشمِ حیرت انجمن آرائیاں
حسنِ تخلیقِ جہاں، لیتا جہاں انگڑائیاں

وہ بلخ کہیے جسے قدرت کا حسنِ لا زوال
خاتمِ فطرت میں وہ وادی زمرّد کی مثال
ذرّہ ذرّہ تھا چرا گاہِ عدن کا اک غزال
سجدہ گاہِ فکرِ انساں، شاہکار ذو الجلال

وہ جگہ تھی آشنائے حسنِ وحدت کے لئے
وہ جگہ تھی محفلِ اہل محبت کے لئے
وہ جگہ تھی راحتِ اہلِ لطافت کے لئے
وہ جگہ تھی رونقِ اہلِ سیاحت کے لئے

اس جگہ سے علم و حکمت کے جُڑے تھے سلسلے
اس جگہ معیارِ شخصیّت کے بنتے زاویے
خامۂ انصاف سے ہوتے یہاں پر فیصلے
خطّہ ہائے ارض سے آتے یہاں پر قافلے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کوئی دن جاتا ہے ٹھہرا تھا وہاں اک کارواں
اس میں تھا کوئی شناسائے رموزِ کُن فکاں
آفتابِ عصمت و عزّت تھا وہ گردوں نشاں
حسن جس کے بانکپن کی پرورش میں تھا جواں

صورتِ پژمردہ ، پیراہن شکستہ بکھرے بال
گردشِ ایّام کا مارا ہوا آشفتہ حال
حاشیے تھے دستِ قدرت کے سطورِ خدّ و خال
حکمت و دانش میں یکتا نازشِ جادو مقال
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یاد گارِ عیش و عشرت کے نشاں چھوڑے ہوئے
صفحۂ ایّام پر اک داستاں چھوڑے ہوئے
اضطرابِ وعدۂ فردا وہاں چھوڑے ہوئے
لاکھ جانوں کو وہاں گرمِ فغاں چھوڑے ہوئے

طبعِ بلبل جس طرح ہوتی ہے گلشن کی طرف
ٹمٹماتی لَو کا رُخ ہو جیسے مدفن کی طرف
جا چکا ہو موسمِ اُردی کسی بَن کی طرف
اہلِ تفریحِ بلخ یوں آئے مسکن کی طرف
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
لیکن اُس گلزارِ سحر انگیز کی شامِ نشاط
پیدا جس سے ہو رہا تھا ایک رنگِ ارتباط
ذرّے ذرّے کی رگوں میں موجزن تھا انبساط
مانی و بہزاد یہ تصویر کھینچیں کیا بساط

نقشۂ فردوس تھی وہ وادئ حیرت فروش
سوز و سازِ زیست کا تھا اک جہاں جوش و خروش
دیکھ کر یہ حسنِ فطرت سامعِ حرفِ خموش
اہلِ سکّانِ بلخ میں رہ گیا خیمہ بدوش
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اب ذرا تقدیر کے بھی پیچ و خم کو دیکھیے
اب متاعِ زیست پر دستِ ستم کو دیکھیے
تربتِ ہستی پہ اب لوحِ عدم کو دیکھیے
ٹوٹتے اک صاحبِ عالی ہمم کو دیکھیے

جس طرح پیمانہ رکھ دیں اک صراحی کے قریب
ذہن جیسے ہو کسی نقشِ خیالی کے قریب
لفظِ سادہ ہو کسی پیچیدہ معنی کے قریب
صاحبِ فہم ایسے ٹھہرا باغِ شاہی کے قریب

کیا خبر تھی ابرِ غم کی اک گھٹا چھانے کو ہے
وادیِ انفاس سے کالا دُھواں اٹھنے کو ہے
رفتہ رفتہ اَوس کوئی روح پر پڑنے کو ہے
کائناتِ دل کہیں زیر و زبر ہونے کو ہے

اب اسیرِ کنجِ تنہائی وہاں رہنے لگا
موسمِ شہرِ بلخ اس کو پسند آنے لگا
سلسلہ اہلِ غنا سے بھی ذرا بڑھنے لگا
بزمِ درویشی میں نام اس کا لیا جانے لگا

نام کو تھی اُس مزاجِ فقر میں فکرِ معاش
اُس کو رزقِ غیب خود گلیوں میں کرتا تھا تلاش
کر کے کوہِ جستجوئے عیش و عشرت پاش پاش
کر رکھی تھی انکسارِ عبدیت میں بود و باش

سارا دن محوِ تماشائے جہاں رہتا تھا وہ
تا غروبِ مہر سوئے مسکنت آتا تھا وہ
کس کو اُس کی کیا خبر خود ذات میں کیا کیا تھا وہ
بس خطِ لوحِ جبیں کا حرفِ بے اِملا تھا وہ

ایک مدّت تک رہا اُس کا یہی معمولِ وقت
ایک مدّت تک رہا خود ذات میں مشغولِ وقت
ایک مدّت تک رہا وہ دہر میں مقتولِ وقت
ایک مدّت تک رہا وہ حاصل و محصولِ وقت

آفتابِ چرخ جب ڈوبا مدارِ وقت سے
ہاتھ کھینچا ہر کسی نے کارزارِ ہست سے
پڑ گئی ہر ایک کو اپنے ہی بند و بست سے
لوٹا وہ دیوانۂ تنہائی کوئے گشت سے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آج لیکن تھی بجھی سی قلب کی بزم سرود
ٹوٹ کر سب رہ گئے تھے عقل کے بند و قیود
تھا سراپا غم کدِ ہستی کا خط اس کا وجود
توڑ کر نکلا بوقتِ صبح عُزلت کی حدود

بادِ مشرق رقص میں تھی پتّہ پتّہ ساز تھا
موسمِ شہرِ بلخ کا اور ہی انداز تھا
باغِ شاہی کو سفر اس کا خراماں ناز تھا
ذرّہ ذرّہ صوتِ پا پر گوش بر آواز تھا

اک صدا آئی اچانک کون ہے رُک جائے واں
آج شہزادیِ سلطانِ بلخ آئی ہے یاں
لوٹ جائے نقشِ پا پر جو بھی کوئی ہے وہاں
ہو نہ یہ دینا پڑے اُس کو اجل کا امتحاں

پھیر کر جب اُس نے رُخ دیکھا سوئے نفیِ جواز
سامنے تھا اک مجسّم جلوۂ محشر طراز
بجلی چمکی شیشہ ٹوٹا ہو نہ پایا احتراز
جنبشِ مژگاں کا لمحہ ہو گیا عصرِ دراز

تھی قیامت خیز ادائے جادوئے حسنِ نظر
کون سی تدبیر اُس کے سامنے تھی کارگر
گلشنِ ہستی کو کرتے خاک آنکھوں کے شرر
چھوڑ کر پروانے شمعِ سوختہ آتے اِدھر

دانت تھے گویا صفائی میں دُرِ نہرِ عدن
لب کہ تھے سرخی میں مثلِ نازشِ لعلِ یمن
صاعقہ تھی روزِ محشر کی وہ ماتھے کی شکن
جس کی زَد میں آنے سے ڈرتا تھا خود چرخِ کہن

مستیِ صبح شفق وہ شاہدِ جانِ بہار
راستوں سے جس کی نکہت کا چھلکتا تھا خمار
وہ ملاحت جو تھی وجدِ جذب کی آئینہ دار
تھا برستا شبنمی زلفوں سے ابرِ مشکبار

آہ وہ چنچل ادائیں آہ وہ چنچل مزاج
ٹوٹتا تھا قہقہوں سے جس کے روحوں کا زجاج
دامنِ حسنِ تغافل میں امنگوں کا خراج
تھی مجال اتنی کہاں کرتا کوئی جو احتجاج

اُس کے سانسوں کی مہک لطفِ خیابانِ چمن
اور لطافت اس مہک کی جانِ جانانِ چمن
وہ گلِ سیمیں بدن تھا وجہِ سامانِ چمن
منہ چھپاتیں سامنے اُس کے عروسانِ چمن

ہے کوئی اس کی کمانِ ابرو سے گھائل نہ ہو
بات یہ ممکن نہیں دیکھے کوئی بسمل نہ ہو
ہو وہ کیا نخچیر جس کے سینے میں ہی دل نہ ہو
کس کو شوقِ سر فروشی ہو جو یہ قاتل نہ ہو
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مختصر یہ ہے اُلجھ کر رہ گئے وہم و یقیں
لوٹ آیا وہ لیے اُس کی شبیہِ دل نشیں
تھی یہی تصویر اب مقصودِ چشمِ احمریں
صبح آہِ سرد تھی تو شام آہِ آتشیں

تھا غلافِ کعبۂ فکر و تخیّل تار تار
وادیِ بطحائے جسم و جاں تھی مثلِ دشتِ خار
جم چکا تھا اس کے رخ پر کرب کا گرد و غبار
بزمِ تنہائی میں اٹھتے ہجر کے برق و شرار

پانی پانی تھا وہ چشمِ آبدیدہ کی طرح
عارضِ ہستی پہ تھا اشکِ چکیدہ کی طرح
دشتِ غم میں تھا کسی شاخِ بریدہ کی طرح
ضعف میں تھا وہ کسی قوسِ کشیدہ کی طرح

تھا کوئی آہو شکارِ نشترِ بیداد تھا
تھا یہ وہ صیدِ زبوں جو چُھٹنے سے آزاد تھا
تھا لبِ خاموش کوئی نقشۂ فریاد تھا
طاقِ نسیاں ہو چکا تھا جو اُسے کچھ یاد تھا

ہو بہو کھینچوں میں اُس کے حال کی تصویر کیا
آیتِ صحفِ محبت کی لکھوں تفسیر کیا
لفظ تو لکھّوں، لکھوں معنی کی میں تقریر کیا
خواب ادھورا ہو جو کوئی اُس کی ہے تعبیر کیا

ظرف کا عرفان ہو جیسے کسی مظروف سے
متن جیسے ہو کوئی مہمل کسی محذوف سے
اختتامِ نشر ہو جیسے کسی ملفوف سے
جیسے ہو خلعِ صفت کوئی کسی موصوف سے

ہو زمیں کو آرزو جیسے بحورِ آب کی
ہو ہوس گردوں کو جیسے مہرِ عالم تاب کی
ہو ضرورت جیسے مسجد کو کسی محراب کی
سوز کو ہو جستجو جیسے کسی مضراب کی

داستانِ گل نہ ہو گویا کہ موسم کے بغیر
سُوکھ جائے سبزہ کوئی جیسے شبنم کے بغیر
بند جیسے ہو نہ کوئی زخم مرہم کے بغیر
حال اُس کا ایسے تھا اُس وجہِ ماتم کے بغیر

نقشۂ سیماب وہ مثلِ مجسم اضطراب
تھا ہمہ گیرِ جہانِ زیست غم کا انقلاب
چشمِ تشنہ کام اُس کی تھی کوئی وحشت سراب
سطحِ آبِ آرزو پر تھا کوئی نقشِ حباب

حسرتوں کو آرزوؤں ، جستجوؤں کو لیے
گم تھا اپنی ذات کے اُجڑے تقاضوں کو لیے
خود کلامی میں مگن تھا پیاسے حرفوں کو لیے
بے خبر بادِ قضا سے تھا وہ پھولوں کو لئے

زندگی اُس کی سرا سر تھی گداز آرزو
محشرِ جذبات میں تھا سوز و سازِ آرزو
خستہ جاں تھا وہ قتیلِ تیغِ نازِ آرزو
بن گیا تھا جلوۂ مشہود ، رازِ آرزو
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
صر صرِ بادِ سیاہِ بخت جب چلنے لگی
آبشارِ کوہِ آفاتِ اجل گرنے لگی
وادیِ حزنِ عدم سے اک ندی بہنے لگی
ساحلِ سطحِ بلخ سے آ کے ٹکرانے لگی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آج دربارِ بلخ میں شورشِ اکرام تھی
دائروں میں منقسم کیا کثرتِ خدّام تھی
آمد آمد اب کہ شاہ واجب الاعظام تھی
مسندِ جاہ و حشم جس کے تہِ اقدام تھی

آج کے دن ہر کوئی خود میں خیال آزاد تھا
اک جہانِ عیش و عشرت موجِ جنبش باد تھا
ہر زباں پر نغمۂ حرفِ مبارک باد تھا
آج شہزادی کا یومِ فرحتِ میلاد تھا

آج استخراجِ ثروت پر تھی مائل بارگاہ
آج تھا جمِّ غفیرِ خَلق تا حدِّ نگاہ
آج طولِ دستِ مخزن پر تھی سب کی واہ واہ
آج تھا رشکِ تماشا جلوۂ عالم پناہ

الغرض ہر فرد کا بدلا ہوا تھا رنگ ڈھنگ
اک پری قافِ مسرّت کی تھی سب کے سنگ سنگ
شاخسارِ فکرِ انساں پر تھا حسنِ جل ترنگ
التفاتِ چشمِ شہ میں تھے عجب سے شوخ و شنگ

پھر اچانک یوں ہوا نقشہ بدل کر رہ گیا
کمرے سے اک خادمہ کی درد ناک آئی صدا
ہر کوئی اک دوسرے کے چہرے کو تکنے لگا
ہاتھ سینے پر رکھے شاہِ بلخ یک دم اٹھا

لرزہ بر اندام پہنچا غرفۂ آرام تک
رُک گئی تھی عقل فہمِ گردشِ ایّام تک
روح ٹھہری رہ گئی تھی جسم میں بس نام تک
حکمِ تعلیقِ قضا آ پہنچا تھا ابرام تک

داستانِ لوحِ دل آنکھوں میں تھی آئینہ بند
ضبطِ اشکِ غم کی مشکل میں پڑا احساس مند
گویا تھی ہنگامۂ محشر ہر اک آہِ بلند
الوداعِ جلوۂ ہستی تھی بنتِ ارجمند

ٹوٹ کر مینائے تسکیں دے گئی داغِ فراق
اک دِیا تھا بجھ گیا اور ہو گئے تاریک طاق
مثلِ بادِ آتشیں پہنچی خبر چین و عراق
شاہ کے غم پر ہوا سب سرحدوں کا اتفاق

گردِ اسفارِ سلاطیں بن گئی طوفان خیز
پا پیادہ ، ناقہ و افراس سب تھے تیز تیز
تھے تپاں قلب و جگر ہر آنکھ ہی تھی اشک ریز
دیکھتے ہی دیکھتے قائم ہوئی اک رستخیز

جو بھی جذباتِ تکلّم تھے نکل کر رہ گئے
دل کے ٹکڑے نوکِ مژگاں سے پھسل کر رہ گئے
گرمئ اظہار سے منہ سب کے جل کر رہ گئے
حوصلوں کی برف کے تودے پگھل کر رہ گئے

ہو گیا آخر کہ غم انگیز دن کا اختتام
ہو گیا تغسیل و تکفیں کا مکمل انتظام
مسجد و دیر و کلیسا میں ہوا اعلانِ عام
آج ہے تدفینِ بنتِ بادشاہِ نیک نام

ایک لہرِ درد گویا خَلق کی صورت اٹھی
اور ہجومِ آہ سے اِک شورشِ حسرت اٹھی
جنبشِ متلوءِ حرفِ حق کی اِک ہیبت اٹھی
آہ کاندھوں پر بلخ کے حسن کی عظمت اٹھی

سوئے شہرِ خامشی نکلا جلوسِ ماتمی
چھا گیا تھا ایک اِک چہرے پہ رنگِ مردنی
کس میں یارا تھا کہ ہو تدفین قطِّ حسن کی
تھی نہ تابِ ضبط اور کاندھا بدلتے تھے سبھی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
خیمۂ تنہائی میں رمزِ اجل کا راز دار
اک جہانِ عشق اشکوں سے تھا جس کے استوار
آخرش تکنے لگا وہ آسماں کو بار بار
رات چھا جانے کا وہ کرنے لگا پھر انتظار
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جب سرِ شام اہلِ تجہیز آگئے تھکے ہوئے
خواب گاہوں میں گئے دن بھر کے وہ ٹوٹے ہوئے
کچھ غمِ شہ کی مروّت میں رہے ٹھہرے ہوئے
حوصلہ شہ کو وہ دیتے آپ خود روتے ہوئے

اب عروسِ شب کی زلفوں کا بچھا کچھ ایسا جال
تھی بہک کر رہ گئی سب کی ادائے قیل و قال
رہ گئے سب کے قوائے بدنیہ ہو کر نڈھال
چھا گیا تھا چشم و دل پر نشّۂ خواب و خیال

سائیں سائیں کر رہا تھا خطّۂ شہرِ بلخ
مشرقِ تقدیس سے اٹّھی نہ تھی لہرِ بلخ
دھیمے سُر میں نغمہ زن تھے چشمہ و نہرِ بلخ
ایک ہنگامہ کہیں خاموش تھا بہرِ بلخ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اب اٹھا درویش بہرِ حاصلِ تعبیرِ عشق
تیز کر کے دھار کو نکلا لیے شمشیرِ عشق
وقت کے پاؤں میں اُس نے باندھ دی زنجیرِ عشق
اور بدل دی قوّتِ تدبیر سے تقدیرِ عشق

بوسہ دے کر مرقدِ حسنِ بلخ کی خاک کو
واسطہ دے کر کہا یہ بانئ افلاک کو
کھول دے چشمِ ملائک پر مرے پیچاک کو
آج زندہ کر دے میرے حق میں جانِ پاک کو

صحّتِ رازِ خلافت کا بھرم رکھنا تھا آج
حرفِ اِنِّی اَعْلَمُ کا نکتہ وا ہونا تھا آج
بسکہ فہمِ عبدیت کا باب اِک کُھلنا تھا آج
آخری تخلیق کا عُقدہ کُشا ہونا تھا آج

داستانِ بِن اَدھم رازیٓ کنندہ ہو گئی
ایک تصویرِ محبّت تھی کہ زندہ ہو گئی


 

میں چھوٹے لوگوں کے گھر کا بڑا ہوں، بات سمجھ!

Share this on

متعلقہ اشاعت

بحر موجی كا تعارف

بحر موجی كا تعارف نام: دیا شنکر تخلص: بحر موجی تاریخ ولادت: 9 ستمبر 1911 جائےولادت: داؤد گنج، ضلع ایٹہ، اتر پردیش، بھارت تعلیم: جھانسی

مزید پڑھیں

امن لکھنوی كا تعارف

امن لکھنوی كا تعارف نام: گوپی ناتھ سریواستوا تخلص: امن لکھنوی تاریخ ولادت: 16 ستمبر یا 21 اکتوبر 1898 جائےولادت: لکھنؤ، اترپردیش، بھارت تعلیم: امن

مزید پڑھیں

شاکر بریلوی كا تعارف

شاکر بریلوی كا تعارف نام: کالکا پرشاد مہروترا تخلص: شاکر بریلوی سن ولادت: 1892 جائےولادت: بریلی، اترپردیش، بھارت شاکر بریلوی کے والد منگل سین مہروترا

مزید پڑھیں

شمیم کرہلوی كا تعارف

شمیم کرہلوی كا تعارف نام: دیا شنکر سکسینہ تخلص: شمیم کرہلوی سن ولادت: 1895 جائےولادت: قصبہ دھرمنگدر پور، اترپردیش، بھارت جناب شمیم کرہلوی نے الہ آباد

مزید پڑھیں

This Post Has One Comment

  1. جاوید احمد خان

    عمدہ کلام

جواب دیں