اک تیرے سوا

اک تیرے سوا

زبیر رضوی

آ ہجر کے موسم
باہوں میں
میں آج تجھے گل پوش کروں
جی بھر کے ملوں
اک تیرے سوا
ہر موسم نے
اس کے نامے لا لا کے دیئے
ہم جن پہ جئے
اک تیرے سوا
ہر موسم نے
اس کے وعدوں کو سچ جانا
اک شب کی امیدوں پہ رکھا
اے ہجر کے موسم
پاس تو آ
میں آج تجھے گل پوش کروں

اک تو ہی اکیلا سچ نکلا
دل دار مرا جھوٹا نکلا

زبیر رضوی

Share this on

Share on facebook
Share on whatsapp
Share on twitter
Share on telegram
Share on email
Share on print

متعلقہ اشاعت

جواب دیں