ہے تنِ باشندگاں پر خوب پوشاکِ وطن

ہے تنِ باشندگاں پر خوب پوشاکِ وطن
اور ترفع کا نشاں ہر ذرۂ خاکِ وطن

وادیِ کشمیر کی نیرنگیاں اپنی جگہ
غیرتِ گلزار ہے لا ریب خاشاکِ وطن

جس کی آغوش محبت ہو کشادہ ہر گھڑی
ایسی مقناطیسیت والا ہے فتراکِ وطن

سب شہیدانِ رہِ آزادیِ ہندوستاں
ہیں یقینا بے بہا انمول املاکِ وطن

جب غبار آلود ہو مشکل مسائل کے تئیں
بیٹھ کر باہم سنوارو! زلفِ پیچاکِ وطن

دیکھو گر چشمِ ہنر سے تو لگیں گے ہند زاد
کوکب و پروین و مہر و ماہِ افلاکِ وطن

بحر ایجادات میں ہروقت ہو کر غوطہ زن
ڈھونڈتے ہیں گوہرِ نایاب تیراکِ وطن

بارگاہِ ایزدی میں کیجیے نوری دعا
چشمِ ملت کو عطا ہو نورِ ادارکِ وطن

(ہے تنِ باشندگاں پر خوب پوشاکِ وطن)
(اور ترفع کا نشاں ہر ذرۂ خاکِ وطن)

از: فیض العارفین نوری علیمی


کہہ رہے ہیں سب یہی میرا وطن آزاد ہے

لٹائی ہم نے تمہارے لئے ہےجان وطن

شادماں ہیں بلبلیں اپنا چمن آزاد ہے

Share this on

متعلقہ اشاعت

جواب دیں