ہمارا ملک جو جنت نشاں ہے

نچھاور اس پہ دولت اور جاں ہے
ہمارا ملک جو جنت نشاں ہے

نہیں قابل سنانے کے زباں ہے
بڑی ہی خونچکاں یہ داستاں ہے

ثبوت عاشقی کو کیسے کیسے
لیا جاتا ہمارا امتحاں ہے

بتا ! اے گردشِ ایام تو ہی
وہ ہم سے آج کیوں کر بدگماں ہے

قبائے عزت و شہرت نہ کاٹے
جو مثل قینچی کے تیری زباں ہے

سکون عاشقی مل جائے فارِح
جدائی کے لیے تیار جاں ہے

فارِح مظفرپوری


 

محبت قلب کے اندر نہاں ہے

نبی کا روضۂ اطہر جہاں ہے

نبی کی نعت جو ورد زباں ہے

Share this on

Share on facebook
Share on whatsapp
Share on twitter
Share on telegram
Share on email
Share on print

متعلقہ اشاعت

This Post Has One Comment

جواب دیں