کالی رات کی ساری بلائیں

کالی رات کی ساری بلائیں
مجھکو روز بلائیں
زرد بلائیں جو چلائیں 
روئے سرخ لباس
تو جانے تو ہم یہ جانیں ، کیسا کون سہاگ
اور اچانک ساتھ یہ بولے کیسی لاگی لاگ!
ساڑھ ستی کی گرہیں ساری کھل گئیں جا خلاص
اب واپس آ بیٹھی ہے جو جہاں سے آئی آگ

 

حُسنِ قدرت

Share this on

Share on facebook
Share on whatsapp
Share on twitter
Share on telegram
Share on email
Share on print

متعلقہ اشاعت

جواب دیں