خون کا خون کر گیے مُنصِف

خون کا خون کر گیے مُنصِف

آہ قاتل سے ڈر گیے مُنصِف
خون کا خون کر گیے مُنصِف

جن سے تھی آبرو عدالت کی
ڈھونڈھیے وہ کدھر گیے مُنصِف

بیٹھے تھے سچ کی پاسبانی کو
جھوٹ بن کر اتر گیے مُنصِف

زخم کو پھول کرنے آئے تھے
اور رکھ کر شرر گیے مُنصِف

گھر میں جوکچھ بچا فساد کے بعد
اُس میں بھی آگ بھر گیے مُنصِف

کر نہ پایا کوئی فسادی جو
کام وہ سارے کر گیے مُنصِف

میر و جعفر سے حوصلہ پاکر
ہم کو دے کر ضرر گیے منصف

رنج و غم کے پہاڑ تھے جن پر
اُن پہ ہی بوجھ دھر گئے منصف

روئے مومن تو خوش ہوئے غدار
قوم پر وار کر گیے منصف

حوصلہ تو فساد نے توڑا
کاٹ کر بال و پر گیے مُنصِف

آئے تھے مسکراہٹیں دینے
سونپ کر چشمِ تر گیے مُنصِف

حاکمِ وقت کی جو خواہش تھی
اُس پہ پورے اتر گیے منصف

سچ جدھر ہے، اُدھر ہی جانا تھا
زَر جدھر ہے، اُدھر گیے مُنصِف

بیچ کر اے فریدی اپنا ضمیر
زندگی میں ہی مر گیے مُنصِف
– – – – – –
از.. فریدی صدیقی مصباحی
مسقط عمان
0096899633908


يه بهي پڑهيں:

چشمِ باخبر :ازفریدی صدیقی مصباحی

حجاب ، دشمنانِ اسلام کا کفن

تو نے اک ہلچل مچادی نعرۂ تکبیر سے

Share this on

متعلقہ اشاعت

جواب دیں