کتنا تھا البیلا موسم

چاہت میں جو بیتا موسم
کتنا تھا البیلا موسم

دل کے اندر آفت برپا
آنکھوں میں ہے بھیگا موسم

اس کی قربت میں گزرا تھا
مہکا مہکا بہکا موسم

فرقت میں اچھا لگتا ہے
پت جھڑ میں بارش کا موسم

دل صحرا کرنے والوں نے
کب دیکھا ہے ہنستا موسم

سب کچھ بھولے پر کب بھولے
الفت کا وہ پہلا موسم

زینؔ کسی کی خواہش کر کے
تنہا جھیلا جلتا موسم
سید انوار زینؔ


 

مجھ کو لوٹا دے جوانی کا سہانا موسم

آ گیا آمدِ سرکار کا پیارا موسم

بندوں کے لیے بھیج دے برسات کا موسم

Share this on

متعلقہ اشاعت

جواب دیں