معذرت

*معذرت*

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

چلو ہم مان لیتے ہیں

محبت اب بھی زندہ ہے۔۔۔

مگر کیا ایک سہمی سہمی آنکھوں والے

اک معصوم لڑکے پر

جفا کے تیر برسانا

اسے بے آبرو کرنا

زمانے بھر کی بے رحمی کی تپتی ریت پر

لا کر بچھا دینا

سلا دینا

محبت ہے ۔۔۔۔۔؟

ارے اس نے تو

اپنے دل کی پاکیزہ مبارک بے غبارہ میں۔۔

تصور کے چمکتے قیمتی شفاف کاغذ پر۔۔۔

لبوں کے گدگداتے نرم ریشوں کی

نشیلی سرخ پرتوں پر

رگوں میں دوڑتے پھرتے

لہو کے قطرے قطرے پر

ترا ہی نام لکھا تھا۔۔۔۔

تجھے ملنے کی خاطر

رات کی دوپہریوں کی بھی

کوئی پرواہ نہیں کرتا۔۔۔

تری معمولی سی خواہش کو

پورا کرنا فرض اولین کہتا۔۔۔

تجھے وہ چودہویں راتوں میں چھٹکی چاندنی کہتا۔۔۔

تری زلفوں کے کالے رنگ کو وہ سرمئی کہتا۔۔۔۔

ترے گالوں کو وہ تشبیہ دیتا

شام کے کے سورج کے سونے سے۔۔۔

ترے ہونٹوں کو

پھولوں کی لہکتی پنکھڑی کہتا۔۔۔۔

مگر تو نے۔۔

بچارے کے مقدر میں

بھیانک رات کی سیاہی کا خط کھینچا۔۔۔۔

جو اس کے پیار نے بخشی تجھے

اس مرمریں رنگت کے آگے

تو نے اس کو ہیچ گردانا۔۔۔

گھنیری بادلی زلفوں سے تونے

اس کے ارمانوں کے فردوسی نشیمن پر

دہکتی آگ بر سا دی۔۔۔

اگر پھر بھی تجھے لگتا ہے

تو نے اس محبت کو

ابھی تک زندہ رکھا ہے۔۔

تو ایسے پیار سے

ایسی محبت سے

وہ لڑکا معذرت خواہ ہے۔۔۔۔

معذرت

               *ناصر خان*

            *نعمت مصباحی*

 


یہ سب دھواں ہے میاں گلفشار تھوڑی ہے

شر پسندوں کی حکومت ہے ذرا دھیان رہے

Share this on

متعلقہ اشاعت

This Post Has 2 Comments

  1. جاوید احمد خان

    بہت خُوب

  2. جاوید احمد خان

    غزل

    پُھول چہرے تھے کہ پہچان میں رکّھے رکّھے
    کھو گئے دِل کے خیابان میں رکّھے رکّھے

    خُود فسانہ وہ بنا بیٹھ گیا اپنا ہی
    اپنے کِردار کو عُنوان میں رکّھے رکّھے

    وہ خیالات میں میرے تو ہے آتا جاتا
    بُھول جاتا ہے مُجھے دھیان میں رکّھے رکّھے

    گُل دریچوں میں ہیں محرومِ تبسُّم اب بھی
    دُھوپ کُملا گئی دالان میں رکّھے رکّھے

    اُس کے وعدوں کو پرکھنے سے پتہ چلتا ہے
    ہم کو لُوٹا گیا احسان میں رکّھے رکّھے

    مُشکِلیں اور بڑھا دی ہیں سفر کی اُس نے
    منزلوں کو رہِ آسان میں رکّھے رکّھے

    اُس کو آنکھوں سے ٹپکنا ہے ضروری ورنہ
    خُون جم جاتا ہے شِریان میں رکّھے رکّھے

    سب نے جاویدؔ لگے ہاتھوں چُرالی غزلیں
    گُم ہیں اشعار بھی دیوان میں رکھے رکّھے
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    جاوید احمد خان جاویدؔ
    پربھنی ٗ مہاراشٹر ٗ بھارت jawedkhan2011@gmail.com

جواب دیں