پُھول چہرے تھے کہ پہچان میں رکهے رکهے

پُھول چہرے تھے کہ پہچان میں رکهے رکهے
کھو گئے دِل کے خیابان میں رکهے رکهے

خُود فسانہ وہ بنا بیٹھ گیا اپنا ہی
اپنے کِردار کو عُنوان میں رکهے رکهے

وہ خیالات میں میرے تو ہے آتا جاتا
بُھول جاتا ہے مُجھے دھیان میں رکهے رکهے

گُل دریچوں میں ہیں محرومِ تبسُّم اب بھی
دُھوپ کُملا گئی دالان میں رکّھے رکّھے

اُس کے وعدوں کو پرکھنے سے پتہ چلتا ہے
ہم کو لُوٹا گیا احسان میں رکهے رکهے

مُشکِلیں اور بڑھا دی ہیں سفر کی اُس نے
منزلوں کو رہِ آسان میں رکهے رکهے

اُس کو آنکھوں سے ٹپکنا ہے ضروری ورنہ
خُون جم جاتا ہے شِریان میں رکهے رکهے

سب نے جاویدؔ لگے ہاتھوں چُرالی غزلیں
گُم ہیں اشعار بھی دیوان میں رکهے رکهے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جاوید احمد خان جاویدؔ

پربھنی ٗ مہاراشٹر ٗ بھارت


آہ غربت نے مجھے لا کے کہاں پر چھوڑا

غزل ہے غیر مردّف، ہے قافیے کی کشاد

شرمندہ ترے رخ سے ہے رخسار پری کا

Share this on

متعلقہ اشاعت

This Post Has One Comment

  1. جاوید احمد خان

    بہت شُکریہ گلوبل اردو

جواب دیں