رفتہ رفتہ وہ قریب آنے لگے

آپ سے جب گفتگو ہونے لگی
چادرِ دل خود رفو ہونے لگی

رفتہ رفتہ وہ قریب آنے لگے
پوری دل کی آرزو ہونے لگی

ان سے وابستہ میں جب سے ہو گیا
میری شہرت چار سو ہونے لگی

جب اُنھیں کوئی نہ ہم سا مل سکا
” پھر ہماری جستجو ہونے لگی "

جانے کیوں لہجے میں تبدیلی ہوئی
آپ سے تم ، تم سے تُو ہونے لگی

وہ ہمارے ان کے ہم ہونے لگے
زندگانی خوبرو ہونے لگی

عشق کی دل تک ہوئی جب دسترس
زیست غم کے رو بہ رو ہونے لگی

ہاتھ فیصل اس نے تھاما جب مرا
میری پھر دنیا عدو ہونے لگی

فیصل قادری گنوری


يه بھي پڑھيں:

بے سبب بے آبرو ہونے لگی

سادگی بے آبرو ہونے لگی

دل کی پوری آرزو ہونے لگی

Share this on

متعلقہ اشاعت

This Post Has 2 Comments

جواب دیں