ستارہ اوڑھ کے نکلی ہو جیسے صبح بہار

نظم : نگار حیرت

جمال روئے درخشاں ردائے سیمیں میں
ستارہ اوڑھ کے نکلی ہو جیسے صبح بہار

اتر کے آئی ہو جیسے فلک سے حور کوئی
گلوئے شاخ۔ سَمَن میں ہو جیسے نور کا ہار
………………………………………
وہ مہ لقا ! کہ تخیل کے اک جزیرے میں
نظر اٹھائے تو مستی میں شعر ڈھلتا ہے

نظر ملائے تو بہکی ہوئی غزل کا کنول
چراغ بن کے نگاہ سخن میں جلتا ہے
……………………………………………..
ہے برگ لالہ پہ آوارہ شوخ سی تتلی
کہ اس کے عارض رنگین پر نظر کا خرام

بہ لَوح نقش و نگاراں پیام عشق ہے یا
حنائی پور سے لکھا ہے زندگی نے سلام
…………………………………………………..
پلک پلک پہ وہ آوارہ جگنوؤ ں کے ہجوم
چراغ خواب جلاتے لطافتوں کے شرر

لبوں پہ رقص کناں اک خیال کا جھونکا
نگاہ شوق کو جیسے نوید عمر خضر
……………………………………………………
یہ دھیما سا لب و رخسار پر تبّسم ہے
کہ چھو کے گزری ہے عارض کو ایک موج شریر

صبا کی لہر نے گیندے کے پھول کو چھیڑا
کہ دست ناز نے کھینچی ہے پنکھڑی سے لکیر
………………………………………………………..
رخ جمیل پہ رخشاں صباحتوں کے رمُوز
کہ منظروں سے مزیّن پہیلیوں کی سحر

ہیں رنگ اتنے کہ آنکھوں پہ کچھ نہیں کھلتا
نگار صبح ازل ہے کہ حیرتوں کا نگر

از : جاوید عادل سوہاوی

Share this on

متعلقہ اشاعت

جواب دیں