تو محبت کا عنوان ہے اے وطن

اے وطن

نعمت رب رحمان ہے اے وطن
تو محبت کا عنوان ہے اے وطن

کتنی سوغات ہیں تجھ کو بخشی گئیں
تجھ پہ مولا مہربان ہے اے وطن

نور ہے اے وطن تو برائے نظر
دل کی راحت کا سامان ہے اے وطن

تجھ سے کیوں نا محبت کریں ہم بھلا
تجھ سے ہم سب کی پہچان ہے اے وطن

سرخروئی کا باعث ہے نسبت تری
بالیقیں تو مرا مان ہے اے وطن

جن کے دل تیری الفت سے خالی ہے وہ
تیری عظمت سے انجان ہے اے وطن

سکھ ہو ہندو مسلمان عیسائی ہو
سب کے ہونٹوں کی مسکان ہے اے وطن

تو ہے مثل شمع مثل پرواؔنہ ہم
تیری شوکت پہ قربان ہے اے وطن

(نعمت رب رحمان ہے اے وطن)
(تو محبت کا عنوان ہے اے وطن)

از : پرواؔنہ برہانپوری


اب کوئی بندش نہیں ہے اب وطن آزاد ہے

تجھ پہ دِل ہوگیا نثار وطن

میرے چہرے کی ہے بہار وطن

Share this on

متعلقہ اشاعت

جواب دیں