وُہ آئے گھر مرے اُردُو اَدَب سمجھنے کو

وُہ آئے گھر مرے اُردُو اَدَب سمجھنے کو

پڑا ہے حُسن کو شاعر سے کام زِندہ باد

پیام بھیجا ’’ وَہیں ! آج شام ‘‘ زِندہ باد

تری کنیز کی جے ہو ، غلام زِندہ باد

وُہ آئے گھر مرے اُردُو اَدَب سمجھنے کو

پڑا ہے حُسن کو شاعر سے کام زِندہ باد

خدا بھلا کرے غالب کے خشک شعروں کا

حسین کرتے ہیں مجھ کو سلام زِندہ باد

معاوِضے میں جو اِک بال ڈَٹ کے مانگ لیا

وُہ ہنس کے بولے ، بس اِتنے سے دام ؟ زِندہ باد

جو ’’ پڑھ رہی ہے ‘‘ اُسے نصف آنکھ ماری ہے

اَگر وُہ ہنس پڑے تو یہ کلام زِندہ باد

نظر جھکا کے ہمیں سادہ پانی پیش کیا

ذِہین ساقی ترا اِنتظام زِندہ باد

تمام لذتوں کے دام ہو گئے دُگنے

فقیہِ شہر تری روک تھام زِندہ باد

ہمیشہ چنتے ہیں پہلے سے کچھ برا حاکم

ترقی کرنے پہ اَپنی عوام زِندہ باد

بچا لو ڈُوبتے کافر کو دِل کے فتوے پر

حرام بھی ہُوا تو یہ حرام زِندہ باد

زَمانے بھر کے غمو ! آؤ مجھ پہ ٹُوٹ پڑو

شرابِ عشق ترا ایک جام زِندہ باد

ہُوئی ہے حشر تلک لیلیٰ ، قیسؔ سے منسوب

جنونی شخص ترا اِنتقام زِندہ باد

 

شہزاد قیس کی کتاب  لیلٰی  سے انتخاب


یہ سب دھواں ہے میاں گلفشار تھوڑی ہے

شر پسندوں کی حکومت ہے ذرا دھیان رہے

Share this on

متعلقہ اشاعت

This Post Has One Comment

  1. جاوید احمد خان

    کیا کہنے

جواب دیں